مہنگائی مسلسل بڑھ رہی، سلیکٹڈ حکومت کا تجربہ ناکام ہو چکا: شاہد خاقان عباسی

اسلام آباد: سابق وزیراعظم اور ایم این اے شاہد خاقان عباسی کا کہنا ہے کہ ملک میں مہنگائی مسلسل بڑھ رہی ہے، اگلے مالی سال میں مہنگائی کی شرح 12 فیصد پر ہو گی۔ عالمی منڈی میں پٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں کم ہوئیں یہاں بڑھا دی گئیں۔ گیس کےبلوں میں 143 فیصد اضافہ ہوگیا۔ آج پاکستان اسٹیٹ انفلیشن میں داخل ہوچکا۔

پریس کانفرنس کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ اگرہم مصنوعی طریقے سے حکومت چلارہے تھے تویہ بھی چلالیں، ہماری حکومت میں حالات بہترتھے، ہم حصول اقتدارکی جنگ نہیں لڑرہے، سلیکٹڈ حکومت کا تجربہ ناکام ہوچکا ہے۔ وزیرخزانہ بتائیں نیا کاروبار کرنے والا کیسے کاروبار کرے گا، پی ایس ڈی پی میں 90 فیصد کی کمی ہو گئی ہے جو تشویش ناک ہے۔ اگر یہ حکومت 5 سال رہی تو ملکی قرض 50 ہزار ارب تک پہنچ جائے گا۔ بینکوں کا ڈیفالٹ بڑھ جائےگا ،لوگ بیروزگار ہوں گے۔ پالیسی ریٹ آج 12 فیصد ہوچکا ،جب ہم گئے تھے تب 6 فیصد تھا۔

شاہد خاقان عباسی کا کہنا تھا کہ حکومت کا اس سال ایک پیسہ بھی ریونیو نہیں بڑھ پایا۔ امسال بھی حکومت کے ریونیو 4 ہزار ارب ہی ہوں گے۔ حکومت کےاخراجات 7 ہزار ارب تک جا پہنچے ہیں۔ پچھلے مالی سال 2018 میں حکومتی اخراجات 5700 ارب تھے۔ ان کا کہنا تھا کہ ثابت ہوا بھینسیں بیچنےسےحکومتی اخراجات میں کمی نہیں ہوسکتی۔

دنیا نیوز کے مطابق ان کا کہنا تھا کہ بجلی کی قیمت میں اضافےکی ملکی تاریخ میں مثال نہیں ملتی۔ ملکی معیشت کا اندازہ 31 مئی 2018 سے 31 مئی 2019ء تک دیکھا جا سکتا ہے، ایک سال میں روپے کی قدرمیں 27 فیصد کمی ہوئی۔ پاکستان کی تاریخ میں روپے کی قدر میں اتنی کمی نہیں دیکھی۔ چینی کی قیمت میں 30 فیصد اورآٹے کی قیمت میں 10فیصد اضافہ ہو چکا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں